علم کی ایک بیش قیمت شمع بجھ گئی

ملک کے معروف ماہر تعلیم اور یونیورسٹی آف مینجمنٹ اینڈ ٹیکنالوجی کے چیئرمین ڈاکٹرحسن صہیب مراد سیمینار میں شرکت کے لئے خنجراب گئے تھے،جہاں سے گلگت واپسی پر ان کی گاڑی ایک موڑ کاٹتے ہوئے الٹ گئی جس کے نتیجے میں انہیں شدید چوٹیں آئیں اور وہ موقع پر ہی اپنے خالق حقیقی سے جاملے جبکہ حادثہ میں ان کے بیٹا بھی زخمی ہوا جسے طبی امداد کیلئے ہسپتال منتقل کردیا گیا ۔ مرحوم کے اہل خانہ اس وقت امریکا میں مقیم ہیں جن کی وطن واپسی پر نماز جنازہ کا اعلان کیا جائے گا۔ ڈاکٹر حسن صہیب مراد جماعت اسلامی کے سابق نائب امیر خرم مراد کے صاحبزادے تھے اور انہیں سی پیک کے حوالے سے ماہر سمجھا تھا۔ ڈاکٹر حسین صہیب نے بیرون ملک سے ایڈمنسٹریٹو سائنسز میں پی ایچ ڈی کی اور وہ انسٹی ٹیوٹ آف لیڈر شپ اینڈ مینجمنٹ کے بانی تھے۔ بعد ازاں انہوں نے علم ٹرسٹ کے زیراہتمام یو ایم ٹی کی بنیاد رکھی۔ان کی وفات پر علمی ،ادبی اور سیاسی شخصیات کی جانب سے دکھ و افسوس کا اظہارکیا گیا اور مرحوم کی شعبہ تعلیم کیلئے خدمات کو خراج عقیدت پیش کیا گیا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریںمصنف سے زیادہ

%d bloggers like this: