بس بھئی بس،کاغذات نامزدگی جمع کرانے کا وقت ختم ہو گیا،

عمران خان نے این اے 59 اسلام آباد اور این اے35 بنوں سے نمائندے کے ذریعے کاغزات نامزدگی جمع کرا دیئے،پرویز مشرف کے نمائندے نے چترال این اے 1سے اور لیہ این اے 188 سے کاغذات نامزدگی جمع کرائے،شہبازشریف این اے 3 سوات سے بھی اکھاڑے میں اتر آئے،حمزہ شہباز این اے 124 اور این اے 132 لاہور سے میدان میں ہوں گے،مریم نواز این اے 127 کے بعد این اے 125 سے قسمت آزمائی کریں گی۔شاہد خاقان عباسی این اے 53 سے عمران خان کے سامنے آ گئے،سردار مہتاب عباسی نے بھی این اے 53 سے کاغذات نامزدگی جمع کرادیئے،سعدرفیق این اے131 سے عمران خان کا مقابلہ کریں گے۔اسپیکر ایازصادق نے این اے 133 اور این اے 125 سے کاغذات جمع کرائے،امیر مقام سوات این اے2 اور پی کے 4 سے قسمت آزمائی کریں گے،بلاول بھٹو این اے 8 مالاکنڈ سے ان ایکشن ہوں گے،

خرم دستگیر این اے81گوجرانوالہ سے انتخاب لڑیں گے،طارق فضل چودھری این اے 52 اور 53 سے میدان میں ہوں گے،جاوید ہاشمی نے بھی انتخاب نہ لڑنے کے فیصلے سے یوٹرن لیتے ہوئے این اے 155 اور این اے 158 سے کاغذات نامزدگی جمع کرا دیئے

گلوکار جواد احمد این اے 131،132 اور این اے 246 سے عمران خان،شہبازشریف اور بلاول بھٹو کے مدمقابل ہوں گے،فردوس عاشق اعوان نے این اے 72 سیالکوٹ کا مورچہ سمبھال لیا،اسلم رئیسانی پی بی 35 مستونگ سے انتخابات میں حصہ لیں گے،ارباب غلام رحیم نے پی ایس 52 عمر کوٹ سے کاغذات نامزدگی جمع کرا دیئے،ادھر عابد شیر علی نے بھی فیصل آباد سے کاغذات نامزدگی جمع کرا دیئے ،ان کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف لوٹا کلب بن چکی ہے ،جبکہ راجہ ریاض کی ذمانت ضبط کرائیں گے

شاید آپ یہ بھی پسند کریںمصنف سے زیادہ

%d bloggers like this: