سول سروس اصلاحات کیلئے 19 ارکان پر مشتمل ٹاسک فورس قائم

سول سروسزاصلاحات،کفایت شعاری،ری اسٹرکچرنگ پرٹاسک فورس قائم کر دی گئی ،جس کی منظوری وزیر اعظم عمران خان نے دے دی،کابینہ ڈویژن نے ٹاسک فورس کے ٹرمزآف ریفرنس بھی جاری کردیے،ٹاسک فورس وزیر اعظم اور کابینہ کی جانب سے بھیجے گئے معاملات کو بھی دیکھے گی،ٹاسک فورس ایکشن پلان پرعملدرآمد کا جائزہ لینے کیلئے مانیٹرنگ میکنزم تیار کریگی،ٹاسک فورس پلان پرعملدرآمد کیلیے مطلوبہ قانون سازی بھی کروائے گی،ٹاسک فورس وفاق اورصوبائی سطح پر پبلک سروس اسٹرکچر ڈیزائن کرے گی،ٹاسک فورس وفاقی،صوبائی سطح پرہیومن ریسورس پالیسیز کےاموردیکھےگی،ٹاسک فورس مینجمنٹ، ریکروٹمنٹ،ٹریننگ، کیریئر پلاننگ کےاموربھی دیکھےگی۔نوٹیفیکیشن کےمطابق سول سروسز اصلاحات کی ٹاسک فورس 19 ارکان پرمشتمل ہے،ٹاسک فورس میں ڈاکٹرثانیہ نشتر،سابق سیکرٹری سلمان غنی،چیف سیکرٹری کے پی، ایڈیشنل چیف سیکرٹری فاٹا،ایم اوڈائریکٹوریٹ جی ایچ کیو کا نمائندہ،وفاقی سیکرٹری سیفران،سینیٹرہدایت اللہ،حبیب اللہ خان،ڈاکٹر عشرت حسین،ڈاکٹرشاہدکارداراوردیگرشعبوں کےماہرین بھی ٹاسک فورس میں شامل ہیں،کفایت شعاری سے متعلق ٹاسک فورس میں 18ارکان شامل ہیں،فاٹااورپاٹاکے خیبرپختونخوامیں انضمام کیلئے بھی ٹاسک فورس تشکیل دے دی گئی جس کے کنوینئرمشیر شہزاد ارباب ہوں گے ،ٹاسک فورس11ارکان پرمشتمل ہے،ٹاسک فورس میں گورنر اوروزیراعلیٰ خیبرپختونخوا،وفاقی وزیربرائے مذہبی امور شامل ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریںمصنف سے زیادہ

%d bloggers like this: