نواز شریف کیخلاف نیب ریفرنسز

اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس عامر فاروق اور میاں گل حسن اورنگزیب نے نواز شریف کی جانب سے فلیگ شپ انویسٹمنٹ اور العزیزیہ اسٹیل  ملز ریفرنس کو دوسری عدالت منتقل کرنے کی اپیل  پر سماعت کی۔سماعت کے دوران ریفرنسز کا پس منظر بیان کرنے کے بعد ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل سردار مظفر عباسی کا کہنا تھا کہ احتساب عدالت کے جج محمد بشیر10 ماہ سے العزیزیہ اور فلیگ شپ ریفرنسز سن رہے ہیں اور ان کا تجربہ بھی دیگر دستیاب ججز سے زیادہ ہے۔اس موقع پر جسٹس میاں گل حسن اورنگ زیب نے ریمارکس دیئے کہ یہ ایسا کیس ہے جس میں حقائق جڑے ہیں۔جسٹس گل حسن نے کہا کہ یہ معمولی نوعیت کا کیس نہیں ہے، یہ ان مقدمات سے نہیں جوڑا جاسکتا جو ہم روزانہ سنتے ہیں۔اس موقع پر ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل نیب سردار مظفر عباسی نے کہا کہ تینوں ریفرنسز یکجا کرنے کی درخواست مسترد ہونے پر سپریم کورٹ سے رجوع نہیں کیا گیا، یہ تینوں ریفرنسز ایک ہی نوعیت کے نہیں۔سردار مظفر عباسی نے کہا کہ صرف اس لیے کسی جج کو علیحدہ نہیں کیا جاسکتا کہ اس نے کسی ایک کیس میں فیصلہ دیا ہے،ان کا مزید کہنا تھا کہ فرد جرم عائد ہوجائے تو ریفرنس منتقل نہیں ہوسکتا، ریفرنس آخری مراحل میں ہیں، لہذا اب ہائیکورٹ کو ہی فیصلہ دینا ہے۔اس کے ساتھ ہی اسلام آباد ہائیکورٹ نے نواز شریف کی اپیل پر سماعت 7 اگست تک کے لیے ملتوی کردی

شاید آپ یہ بھی پسند کریںمصنف سے زیادہ

%d bloggers like this: