اثاثہ جات کی نیلامی کا معاملہ ،اسحاق ڈار کا رد عمل

 سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا کہ لندن میں خوشی سے نہیں بیٹھا ہوا اور نہ ہی یہاں جھوٹی رپورٹیں بنتی ہیں، میں بیمار ہوں اور روزانہ کی بنیاد پر چیک اپ کراتا ہوں۔انہوں نے کہا کہ میری کوئی فیکٹریاں نہیں چلتیں جس کیلئے ٹیکس بچاؤں لہٰذا مجھ پر ٹیکس بچانے کا الزام بےبنیاد ہے۔اسحاق ڈار نے مزید کہا کہ ‘اس ملک کا آئین توڑنے والے فوجی آمر کا پاسپورٹ اسے دیا جارہا ہے اور میرا پاسپورٹ منسوخ کیا جارہا ہے، جس شخص نے ججز کو قید کیا اس کے سیل شدہ گھر کو کھلوایا جارہا ہے، نعیم بخاری سے کہا جارہا ہے کہ گھر کی صفائی کروائیں اور میرے اثاثے نیلام کیےجارہے ہیں’۔اسحاق ڈار کا کہنا تھا کہ جب صحت اجازت دے گی تو میں وطن واپس آجاؤں گا، جو کرنا ہے کرلیں۔انہوں نے کہا کہ میری جائیداد اللہ کی امانت ہے، ابھی یہ جو کر رہے ہیں کرنے دیں، اللہ تعالیٰ ان سے بدلہ لے گا۔واضح رہے کہ  احتساب عدالت نے اسحاق ڈار کے بینک اکاؤنٹس اور جائیداد کو قبضے میں لے کر نیلام کرنے کا حکم دیا ہے۔عدالتی فیصلے میں کہا گیا ہے کہ صوبائی حکومت کو اختیار ہے کہ ملزم کی جائیداد اور اثاثے فوری قبضے میں لے کر نیلام کرے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

%d bloggers like this: