عیدالفطر کی شاپنگ آخری مراحل میں، دکانوں پر رش

چوڑیوں کے بغیر عید کا کیا مزا، خواتین نئے لباس کے ساتھ کوئی اور زیور گہنا پہنیں یا نہ پہنیں خوش رنگ چوڑیوں سے کلائیاں ضرور سجاتی ہیں، جب قوس قزح کے رنگوں والی خوبصورت نازک چوڑیاں ہاتھوں میں سجتی ہیں تو تیاری کو بھی چار چاند لگ جاتے ہیں،،، رمضان کے آخری عشرے میں بازاروں میں زیادہ رونق بھی چوڑیوں کے اسٹالز پر ہی نظرآتی ہے،،،چوڑیوں اور مہندی کے بغیر خواتین کی عید پھیکی سمجھی جاتی ہے، ہاتھوں میں کھنکتی چوڑیوں اور مہندی کی خوشبو سے یہ تہوار مہک سا جاتا ہے،،، عید کی آمد سے قبل ہی بازاروں میں رنگا رنگ چوڑیوں کے سٹالز سج جاتے ہیں،،،
لباس کا انتخاب جتنے ذوق و شوق سے ہوتا ہے اس کے ساتھ چوڑیاں بھی اتنی ہی لگن سے چنی جاتی ہیں ،،،میچنگ چوڑیوں کی خریداری میں وقت گزرنے کا پتہ ہی نہیں چلتا،،، کم سن بچیاں بھی میچنگ میں کسی سے پیچھے نہیں،،،رمضان کے آخری عشرے میں بازاروں میں زیادہ رونق بھی چوڑیوں کے اسٹالز پر ہی نظر آتی ہے، برقی قمقموں کی جگمگاہٹ میں کانچ کی نازک چوڑیاں اور بھی دلفریب لگتی ہیں،،، اس کا اندازہ چوڑیوں کے سٹالز پر عورتوں کے رش سے لگایا جا سکتا ہے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریںمصنف سے زیادہ

%d bloggers like this: