ممتاز شاعر اور مزاح نگار ابن انشاءکی40ویں برسی

اپنی شاعری سے دلوں کو لوٹنے والے ابن انشا کا اصلی نام شیر محمد خان تھا۔15جون 1927ء کو پیدا ہوئے. انہوں نے اپنی شاعری میں سادہ اندازاپنایا ۔ وہ اپنے مزاح سے بھرپور کالمو ں کی وجہ سے بھی مشہور تھے۔ ان کی مقبول ترین غزل انشاء جی اٹھو کو جدید دور کی کلاسیکی غزل قرار دیا جاتاہے۔ابن انشاء کی پہچان مزاح نگار اور سفر نامہ نگار کی حیثیت سے ہے۔ وہ ایک منفرد شاعر بھی تھے۔ اپنے سفر ناموں میں چلتے ہو توِچین کوچلئے، آوارہ گرد کی ڈائری، دنیا گول ہے اور ابن بطوطہ کے تعاقب میں انہوں نے اپنے مخصوص طنزیہ انداز میں تحریر کیا۔ اس کے علاوہ اردو کی آخری کتاب اور خمار گندم ان کے کالموں کے مجموعے ہیں۔ انہوں نے ریڈیو پاکستان اور وزارت ثقافت میں بھی کام کیا۔ ابن انشاء نے اقوام متحدہ کے مشیر کی حیثیت سے متعدد ممالک کا دورہ کیا۔  ان کے لفظوں میں رومان تھا اور شعر میں ان کا آہنگ میر سے ملتا تھا۔  انشاء جی 11جنوری 1978ء کو انتقال کر گئے۔ منفرد تحریروں کے باعث وہ آج بھی اردو ادب کے گراں قدر سرمائے کے طور پر یاد رکھے جاتے ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریںمصنف سے زیادہ

%d bloggers like this: