چیف جسٹس کی جائے وقوعہ پر آمد، صورتحال کا خود جائزہ لیا

لاہور کے علاقے ماڈل ٹاؤن میں سپریم کورٹ کے جج جسٹس اعجاز الاحسن کے گھر پر نامعلوم افراد کی جانب سے دو بار فائرنگ کی گئی ہے۔ فائرنگ کے واقعات گزشتہ شب 10:45 اور آج صبح 9:45 منٹ پر پیش آئے۔ واقعات کے بعد فرانزک ٹیموں نے دو مرتبہ جسٹس اعجازلاحسن کے گھر کا دورہ کیا اور گولیوں کے سکے و دیگر شواہد اکھٹے کیے ہیں۔ ابتدائی تحقیقات کے مطابق رات کو فائر کی گئی ایک گولی مرکزی دروازے اور صبح فائر کی گئی دوسری گولی کچن کی کھڑکی پر لگی ہے.دوسری جانب چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار واقعے کے بعد جسٹس اعجازالاحسن کی رہائش گاہ پر پہنچے اور صورتحال کا خود جائزہ لیا۔ چیف جسٹس نے آئی جی پنجاب کو بھی جسٹس اعجازالاحسن کے گھر طلب کیا۔ وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے بھی واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے آئی جی پنجاب پولیس سے رپورٹ طلب کرلی ہے۔ سپریم کورٹ باراورلاہورہائیکورٹ بار نے فائرنگ کی شدید مذمت کی ہے۔۔ آصف زرداری، عمران خان اور رانا ثنااللہ سمیت سیاسی قائدین نے بھی واقعے کی  شدید مذمت کرتے ہوئے ملزمان کی جلد گرفتاری کا مطالبہ کیا ہے.چیف جسٹس پاکستان نے جسٹس اعجاز الاحسن کو پاناما کیس کے فیصلے پر عملدرآمد کے لیے نگراں جج تعینات کیا تھا۔ وہ پاناما فیصلے پر عملدرآمد کے لیے نگراں جج کے فرائض سرانجام دے رہے ہیں اور شریف خاندان اور اسحاق ڈار کے خلاف نیب میں دائر ریفرنسز میں پیش رفت کو مانیٹر کر رہے ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

%d bloggers like this: