ایم کیو ایم ایک بار پھر اہمیت اختیار کر گئی

پارلیمانی کمیٹی میں فاروق ستار کا ووٹ جس پلڑے میں گیا وہی بھاری ہو گا۔نگران وزیر اعظم کی تقرری کے لئے قائم پارلیمانی کمیٹی میں 12 ارکان ہیں جن میں سے6ارکان کا تعلق حکومت اور 6 کا تعلق اپوزیشن سے ہے۔اپوزیشن کے 6 ارکان میں سے 3 پیپلز پارٹی 2 تحریک انصاف اور 1 رکن ایم کیو ایم کا ہے۔پارلیمانی کمیٹی میں اتفاق رائے نہ ہونے کی صورت میں ووٹنگ ہو گی ۔ووٹنگ کی صورت میں کامیابی کے لئے کسی بھی فریق کو سادہ اکثریت درکار  فاروق ستار نے حمایت کی تو حکومت با آسانی تجویز کردہ شخصیت کو نگران وزیر اعظم بنوا لے گی۔فاروق ستار نے اپوزیشن کا ساتھ دیا تو حکومت مشکل میں پڑ جائے گی۔ایم کیو ایم کی حمایت حاصل کرنے کے لئے حکومت نے رابطے شروع کر دیے۔شہباز شریف کا دورہ کراچی بھی اسی سلسلے کی کڑی تھی، وزیراعظم اور اپوزیشن لیڈر نگراں وزیراعظم کے چناؤ پر متفق نہ ہونے کی صورت میں معاملہ پارلیمانی کمیٹی میں پہنچ جائےگا

 

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

%d bloggers like this: