پمزہسپتال میں ڈاکٹروں، پیرا میڈیکل سٹاف اور ملازمین کی ہڑتال دسویں روز بھی جاری

ہڑتالی ڈکٹرز پیرا میڈیکل سٹاف اور ملازمین صبح نو بجےنعرے بازی کرتے ہوئے ایڈمن بلاک کے سامنے جمع ہو گئے۔ ہڑتال کے باعث او پی ڈی میں آنے والے مریضوں کی بڑی تعداد نے چیک اپ کیلئے ایمرجنسی کا رخ کر لیا۔ جہاں بے تحاشہ رش ہو جانے کی وجہ سے مریضوں کی قطاریں لگوانی پڑیں جو ایمرجنسی سے بھی باہر تک چلی گئیں۔ آج مظاہرین سے اظہار یکجتی کے لیے اراکین قومی اسمبلی بھی احتجاج میں شریک ہوئے۔ قومی اسمبلی کی قاٰئمہ کمیٹی بیین الصوبائی کے چیرمین قہار اچکزئی ،ایم این اے نسیمہ پائیزئی نے بھی احتاجی ڈاکٹرز سے اظہار یکجہتی کیا۔ پمز کو یونیورسٹی سے الگ کرنے کیلئے حکومت کو اسمبلی میں بل لانے کیلئے مہلت دی تھی جو آج ختم ہو گئی۔ احتجاجی ملازمین نے ایڈمن بلاک سے نرسنگ کالج تک اپنے حقوق کی بحالی کیلئے نعرے لگاتے ہوئے ریلی نکالی۔ ہڑتالیوں کا کہنا ہے کہ آج تک کی مہلت تھی امید ہے مطالبات مانے جائیں گے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ کل ہم اپنے لائحہ عمل کا اعلان اور دھماکہ خیز پریس کانفرنس کریں گے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.