سری نگر:مقبوضہ کشمیر میں 8 سالہ آصفہ قتل کیس کی سماعت

سری نگر: مقبوبہ کشمیر میں آٹھ سالہ آصفہ بانو زیادتی اور قتل کیس کی سماعت ہوئی، سماعت کے دوران زیادتی میں ملوث ملزم سنجی رام، دو پولیس افسران سمیت آٹھ ملزمان کو عدالت میں پیش کیا گیا۔ عدالت نے ملزمان کے خلاف چارج شیٹ کی کاپیاں دینے کا حکم دیا، جموں کشمیر حکومت نے کیس کو تنازعات سے بچانے کے لیے دو سکھ پراسیکیوٹر تعینات کیے ہیں، دوران سماعت مقتول آصفہ کے والد نے کیس کو مقبوضہ کشمیر سے باہر منتقل کرنے کی درخواست بھی کی۔آصفہ کیس کی وکیل دپیکا سنگھ راوت نے عدالت میں سیکیورٹی فراہم کرنے کی استدعا کرتے ہوئے کہا کہ آصفہ قتل کیس کی پیروی کرنے پر مجھے قتل کی ددھمکیاں مل رہیں ہیں ، مجھے ہندو دشمن بھی قرار دے دیا گیا ہے، آصفہ کی وکیل نے کہا میرا سوشل بائیکاٹ ہو چکا ہے آگے کیا ہوگا کچھ پتا نہیں ہے۔جبکہ عدالت نے آصفہ قتل کیس کی سماعت 28 اپریل تک ملتوی کر دی ہے۔واضح رہے کہ مقبوضہ کشمیر کے ضلع کٹھوا میں 8 سالہ بچی آصفہ کو اغوا کے بعد کئی روز تک اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد قتل کر دیا گیا تھا، جس کے بعد ہندو انتہا پسندوں کی جانب سے دھمکیوں کے بعد آصفہ کے خاندان نے آبائی علاقہ چھوڑ دیا ہے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

%d bloggers like this: