ترکی: بڑی اپوزیشن جماعت کا پارلیمان کو خیرباد کہنے پرغور ریفرینڈم کا دوبارہ انعقاد ہونا چاہیے، حزب اختلاف

حزب اختلاف پارٹی کی خاتون ترجمان سیلین سیّک بوک نے کہا ہے کہ ہم ریفرینڈم کے نتائج کو تسلیم نہیں کرتے ہیں۔ اس میں کسی کو شک نہیں ہونا چاہیے کہ ہم اس کے خلاف اپنے تمام جمہوری حقوق کو استعمال کریں گے۔ مس بوک نے کہا کہ ریفرینڈم کا دوبارہ انعقاد ہونا چاہیے کیونکہ اس کی اعتباریت اور ساکھ پر ترکی اور بین الاقوامی سطح پر سوال اٹھائے جارہے ہیں۔ ترکی میں منعقدہ دستوری ریفرینڈم کے نتائج کے مطابق  ہاں کے حق میں 51 فی صد سے زیادہ ووٹ آئے ہیں جبکہ ناں کے حق میں 49 فی صد ووٹ پڑے ہیں۔ اس طرح صدر رجب طیب ایردوآن بمشکل ہی ملک میں صدارتی نظام کے نفاذ کے لیے اپنی مجوزہ آئینی ترامیم کو عوامی ووٹوں سے منظور کراسکے ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریںمصنف سے زیادہ

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.